تازہ ترین
ur
بنیادی صفحہ » آزمانک » منی حیال ئِ سرشَماں…..قیس مُسافرؔ

منی حیال ئِ سرشَماں…..قیس مُسافرؔ

من کہ دیم پہ وتی میتگ ئَ سر گِپتاںتہ منی دِل ئِ تہا  تَہر تہریں پِگرو حیالاں سرکشّ اِت۔من چہ حیال ئِ سر شماں وشّیانی سرگْواتے کشّگ ئَ مارگ ئَ اِتاں کہ من پنچ سال ئَ رند یم پہ وتی میتگ ئَ سر گِپتگ اِتاں۔پنچ سال اَت کہ من وتی بنُکی ہنکین رمبینتگ ات و انچیں شَہرے ئَ اتکگ و جہہ منند بُوتگ اِتاں کہ اِدا بنی آدم بنی آدمی ئَ چہ گیشتر یک روبوٹ مشینے ئِ وڑا اَت ۔۔۔بیست و چار ساہت دزگٹّ۔۔۔۔شور و الگشارے ئِ سئیلابے اَت۔۔۔من کہ اولی رند ئَ جولائی ئِ ماہ ئَ اے شہر ئَ اتکگ اِتاں۔۔۔۔منی جند و منی تہنائی اَت  تاں کہ سالے ئَ من گوں در و دیوالاں نیاد و تْران کُت۔لہتے کُہنیں سنگت است اِنت کہ چہ وت ئَ دزگٹّ اِتنت۔۔اگاں یکشمبے ئِ روچ ئَ دزپچ اتنت گُڑا سرجمیں روچ اِش پہ واب گْوست۔منی زِند مان ئِ شپ و روچ شہر ئِ در و دمکاں وتی وڑا رجان کُتنت۔۔۔۔شہر ئِ تب و ہیل کمّ کم ئَ ّ مجگ ئَ جاگہ کنان بُوتنت۔

آ شپی دوازدہ بج ئَ من لوگ ئَ سر بُوتگ اِتاں۔

نیم کلاک  نہ گْوستگ ات کہ منی کوٹی ئِ دروازگ یکّے ئَ جت۔

’’گلّی ئِ دپ ئَ ترا یکّے لوٹگ ءَاِنت‘‘

من کہ دروازگ پچ کُت سْیہ کوچگیں زہگے ئَ سر کشّ اِت ومن ئَ گُشت۔

’’بُگو انگہ چہ کار ئَ نہ یتکہ‘‘

من  پسّہ گردینت۔

من سکّ دمبُرتگ اَت دروازگ شبند کُت و وتی گندلانی سرا تچک بوتاں۔

جیڑگانی ہارے ات کہ سر ئِ تہا شیپ گران اَت منی گْوست ئِ ندارگاں لیپگ کنان اَت۔

من  جیڑ اِت ۔

’’پہ راستی نوں شہرئِ تب و رنگاں من ئَ گوں وت ئَ رجینتگ ۔چِدو پیسرمن گوں وتی سنگتاں ہچبر چُشیں دْروگ نہ بستگ کہ من لوگ ئَ بِباں و بُگُشاں کہ من ادا نیاں۔۔۔۔شہر ئِ زِند و میتگ ئِ زند ئِ تہا چنچو فرق اِنت۔؟‘‘

من چہ وت ئَ جُست کنگ ئِ اِتاں۔

من جیڑگ ئَ اِتاں۔زاہری پوشاک ئِ چیر ئَ لاچاریانی زنگ گپتگیں بالاد اَت کہ من ئَ گون اَت۔۔۔بالاد ئِ مجگ و جوہر پیسری وڑا نہ اَت ۔شہر ئِ زِند ئَ روزگار ئِ دَر باز اِتنت و زِند ئِ تجربگ اوں روچ پہ روچ ودّان اِتنت۔بلئے چہ زِند ئِ راستیاں سِدان و دُور بوہان اِتاں۔۔۔۔پدایکروچے چوش بُوت کہ چہ زِند ئِ سْیادیاں سِدان بُوتاں۔برے برے دِل ئَ گُشت کہ من وت ئَ وتواہ  (Selfish)ئِ نام ئَ بِدیاں۔و پدا زِند ئِ جنجال و جیڑہ انچو گیش بوتگ اِتنت کہ من گوں وت ئَ گیش نہ بُوتگ اِتاں۔۔۔۔شہر ئِ جاوراں پابند کُتگ اَت اگاں روچے روچے کہ چہ وتی کاراں گیشّ اتگ اِتاں۔۔۔تہ شہر ئِ جاور ہما روچ ئَ حراب بُوتگ اِتنت۔۔۔یکروچے سنگتے چہ مُلک ئَ اتکگ اَت من ئَ فون ئےِ کُت کہ ہوٹل ئَ داشتگ بیا ۔۔۔من گُشت شر بیگاہ ئَ کایاں۔۔۔مگرب ئَ چہ رند مئے دَمگ ئَ دو ٹولی وت ماں وت ئَ مِڑ اِتنت ہما تیر گْواری و جنوکائی بُوت کہ گُشئے کیامت ئِ ندارگ اَت۔۔۔پدا منی رَؤگ نہ بُوت۔۔۔دومی روچ ئَ ہوٹل ئَ شُتاں کاؤنٹر ئِ نشتگیں مرد ئَ حال دات کہ تئی مردُم سُہبی چہ ہوٹل ئَ دَر اتکگ۔

ماہے ئَ رند دگہ سنگتے ئَ من ئَ حال دات کہ نوربکش تئی سرا شرّ زَہر اِنت گُشتگ ئےِ من شہر ئَ شُتگاں۔۔۔من ئَ آہگ ئِ ودارئےِ داتگ بلئے پدا نہ یتکگ۔۔۔۔من نوربکش چوں سرپد بُکُتیں شَہرئِ زِند ئِ لاچاری چہ میتگی زِند ئَ گْران تِر اِنت۔

باہوٹؔ گِلّہ اَت کہ من ہسپتال ئَ آئی ئِ چارگ ئَ نہ شُتگ اِتاں۔

ہمبلؔ ئَ وتی رُوہ ہمے واستہ چہ من گِپتگ اَت کہ آئی ئِ دُکّان ئِ سامانانی زُورگ ئِ واستہ بازارئَ من آئی ئِ ہمراہ داری کُت نہ کُتگ اَت۔

سکندر ؔزَہر اَت کہ منی سوج داتگیں ٹرانسپورٹ ئَ آئی ئِ کریہانی زرّ کمّ نہ کُتگ اَنت۔

عبداللہؔ ئِ دِلگْرانی ایش اَت کہ من ائر پورٹ ئَ آئی ئِ دیما شُت کُت نہ کُتگ اَت۔

منی میار یکّے نہ اَت کہ من چہ وتی سرا دُور بُکتیںو ننکہ میار دُورکنگی چیزے اَت۔۔و منی ہمک ہبر منی سنگتاں گُشئے دْروگ لگّ اِتنت و پدا من اوں کِمار نہ کُت۔

مرچی کہ پنچ سال ئَ رند دیم پہ وتی میتگ ئَ سر گِپتگ اِتاں اے پنچیں سالانی تہا دورندئَ  مُلک ئِ سرکار بدل بُوتگ اَت۔من جیڑگ ئَ اِتاں کہ نوں منی میتگ ئِ زِند وشحال بیت۔اے دوئیں حکومتانی نْیامی مُدّت ئَ باز کار بُوتگ ۔

من ئَ یات آہگ ئَ اَت و منی یات گُشئے زِندگیں وابے ئِ وڑا منی دیما پدّر بوہان اِتنت۔

من گِندگ ئَ اِتاں کہ منی میتگ و نزّیکیں شہرئِ نیْام ئَ دہ کلومیٹر ئِ کشک کہ مچکدگ ئِ تہا چہ گْوزان ئَ نِہنگ ئَ سر گْوزیت و توران آبادؔ ئَ سر بیت کہ اگاں مرُدم پادانی چرے راہ ئَ بُہ شُتیں لانکے ئَ پُلکانی تہا مین شُت۔۔۔من گِندگ ئَ اِتاں کہ مرچی اے کِشک پکّاکنگ بُوتگ و منی میتگ و تورا ن آباد ؔئِ کَؤرئِ نیام ئَ پُہل ہم بند گ بُوتگ ۔

چہ مچکدگ ئَ کہ گْوستاں منی میتگ زاہر اَت ومنی پیش سلامی ئَ میتگ ئِ سرون ئَ وانگجاہ اَت کہ من تاںہشت جماعت ہمدا ونتگ اَت و پدا درجگ ئےِ  ودّینگ بُوتگ اَت و وانگجاہ ئِ دَر و دِیوالانی رنگ و روگِن اوں نوک اِتنت۔

باہوٹ ؔ،ہمبلؔ ،سکندرؔو عبداللہؔ منی وش اَتکی ئَ منی راہ ئِ سرا اوشتاتگ اِتنت۔آہاں وتی گِلّہ و دِل آزاری شُمشتگ اِتنت۔۔۔۔باہوٹؔ ،ڈاکٹرےؔ،ہمبلؔ، سوشل ویلفئیرئِ افسرے،سکندرؔ ئَ ایم بی اے کُتگ اَت و وتی بزنس ئَ گوں دزگٹّ اَت و عبداللہؔ ہم  ایرگیشن ڈیپارٹمنٹ ئَ  شرّیں اُگدہے ئِ سرا اَت۔

من اناگہ پدْرہِتاں۔۔۔۔کہ انگت من نوکی سر گِپتگاں پہ وتی میتگ ئَ۔۔۔۔۔من پیسر ئَ حیالانی دُنیاہے ئِ مُجانی تہا اندیمیں ندارگ و مردُمانی شوہازگ ئِ جُہد ئَ کنگ ئَ اِتاں۔۔۔۔۔اصل ئَ من وتی بے تاہیریں زِرد ئَ چہ شہر ئِ الگشار ئَ دَر کنگ لوٹگ ئَ اِتاں۔

پنچ سال ئَ رند موٹلانی اوشت جاہ (بسانی اڈّہ)دیستگ اَت۔

پنچ سال ئَ رند بس ئِ ٹکٹ چہ پنچ سد کلدار ئَ ودّاِتگ اَت و پانزدہ سال کلدار بُوتگ اَت۔ بسانی رنگ و داب اوں بدل بوتگ اِتنت۔بسانی ازباب و سامانانی لڈّگ ئِ بُرز جاہ(ٹول) نیست اَت۔ٹول جہل ئَ پِر اتنت  پاسنجرانی سامان جہل ئَ کپتگ اِتنت گاڑی ئِ کلینر و ہمّال گوں لہتے گْوسک و پسانی پاد و دستاں بندگ ئَ گُلائیش اِتنت۔کساس دہ گْوسک و پانزدہ پس اِتنت۔یک پہ یکّ ئَ اشانی دست و پاداں بندگ ئَ اِتنت و ہمے ٹولانی تہا مان چِنگ ئَ اِتنت۔

منی کش ئَ بُکشی ایں ورناہے اوشتاتگ ات ۔من ئَ گُمان بوت کہ گاڑی ئِ سیٹھ اِنت من جُست کُت۔

’’اے پس و گوکاں شُما کُجا بَر اِت‘‘

’’مندئَ۔۔۔۔۔پدا ایران ئَ بر اَنت اِش‘‘

’’گُڑا۔۔۔چو۔۔۔۔(من دست شہار دات)اے نہ مِر نت؟‘‘

’’بلئے۔۔۔۔۔برے برے مِرنت اوں۔۔۔بلئے مارا کار نیست ۔۔۔اے ہما واہندئِ مال ئِ ذِمّہ ئَ انت ۔۔۔مارا وتی کریھ رسیت۔۔۔۔۔گوکے ئِ سرا دوازدہ سدو پسے ئِ سرا ہئی سد(۸۰۰) کلدار۔۔۔۔۔‘‘

’’بلئے اے گُنگدام اَنت ۔۔۔۔ہژدہ کلاک ئِ سفر ئَ اے بز ّگ اَنت، شُمارا بزّگ نہ کنت۔۔۔۔‘‘

آئی ئَ منی گپّ ئِ پسّو نہ دات۔۔۔بلئے من ماراِت کہ آئی ئَ منی گپّ وشّ نہ بوت۔

پدا سجہیں راہ ئَ ہمے بُکشی ایں ورناہ ئَ گوں من ہبر نہ کُت گُشئے زاناں من ئَ آئی ئِ بیرے پِر۔۔۔۔۔۔‘‘

بس ئِ تہا من سجہیں راہ ئَ ہمے جیڑگ ئَ اِتاں کہ بنی آدم ئَ بیست و یکُمی کرن ئِ تہا وتی گامگیج ایر کُتگ اَنت۔۔۔بلئے بنی آدم ئِ ہمک کِردئِ گامگیج  گُشئے دیم  پہ کُہنیں زمانگ ئِ نیمگ ئَ روان اَنت۔۔۔۔مارشت وتی چہرو شُبین ئِ کالب ئَ دَر آہان اِنت۔

’’اُستاد۔۔۔۔چنچو پھٹان گوں باریں۔۔۔۔۔‘‘

من چہ واب ئَ جہہ سرّ اِتاں۔۔۔۔من ڈرائیور ئِ پُشت ئِ سیٹ ئَ نشتگ اِتاں۔۔من چہ کھڑکی ئَ سر کشّ اِت۔۔۔بس چین یے ئِ سر ا اوشتاتگ اَت و من اٹکل جت کہ اے پسنی کوسٹ گارڈ ئِ چیک پوسٹ اِنت۔

’’۔۔انّاں۔۔۔پھٹان گون نیست اِنت۔۔۔۔۔‘‘

’’پس ۔۔وَ گون ناں۔۔۔۔۔۔‘‘

سپاہیگ ایر کپت و ٹولانی نیمگ ئَ رہ گِپت۔

’’۔۔او بیا اِدا۔۔۔۔۔۔‘‘

اُستادئَ دوسد کلدار پنجہ ئِ تہا پتات و سپاہیگ ئِ نیمگ ئَ شہاؤرت ۔

سپاہیگ ئَ لہمیں بچکندگے جت و چہ بس ئَ ایر کپت۔

ہمےحساب ئَ گْوادرئِ کراس ئَ تاں منی منزل ئَ پنچ جاگہ ئِ چیک پوسٹ ئَ یک وڑا پھٹان ئِ جُست بُوت و پدا ہرکس ئَ وتی مُزّ زُرت و چہ بس ئَ ایر کپت۔

’’بیچارگیںپھٹان۔۔۔۔ترا ہچ جاگہ ،جاگہ نیست۔۔۔۔۔ٹوپ و بمب تئی سرا تجربگ کنگ بنت۔۔۔۔۔وشکند و کِسّہ تئی سرا جوڑ بنت۔۔۔۔۔ابدالی و گنوکی ئِ کِسّہ تئی مشہور اِنت۔۔۔۔۔ہاہاہاہاہاہاہا‘‘

من ئَ کند گ اَتک۔ڈرائیور ئَ چکّ جت۔

منی منزل  اَتکگ اَت۔۔۔۔توران آبادؔ ۔۔۔۔بلئے انگت ئَ من ئَ کؤر ئَ آدست رَؤگی اَت۔

’’شرّیں یار ترا دیست۔۔۔۔دَئِیگے دئے گوں چرسے گِراں۔۔۔۔‘‘

گوں بس ئِ ایر آہگ ئَ امجد ئِ اولی سلام اَت کہ من ئَ دات ئےِ گُشئے من و امجد کسانی ئِ سنگت اِنت۔۔۔۔‘‘

من چہ وتی کسانی ئِ کِشک ئَ گْوزان اِتاں۔۔۔۔منی واب درْوگے اَت ۔۔۔انگت ئَ مردُم چہ لانکے ئَ  پُلکانی تہا مین رَؤگ ئَ اَت۔وانگجاہ ئِ درو دیوال پْرشتگ اِتنت ۔۔۔۔وانگجاہ ئِ پْرشتگیں ماڑی گُشئے گریوگ ئَ ات ئَ و آئی ئِ سرا گْوات ئَ گونیں بیرک ئِ سر بُرز اَت۔

من شر ّواب دیستگ اَت بلئے واب چپّ اَت۔

وانگجاہ ئِ پُرشتگیں دِیوال ئِ کش ئَ باہوٹؔ ،سکندرؔ،ہمبلؔو عبداللہؔ اوشتاتگ اِتنت۔منی وداریگ اِتنت۔۔۔۔۔۔

منی دِل وش اَت کہ منی کسانی ئِ سنگت چہ من دِل آزار و زار نہ اَنت منی وش اَتک ئَ منی رَہ سرئَ اوشتاتگاں۔۔۔۔من کہ نزّیک ئَ سر بُوتاں۔۔۔۔

منی کسانی ئِ سنگتانی رنگ برگشتگ اَت و لُنٹانی سرا گُشئے کَمیرپِرداشتگ اَت۔

باہوٹؔئِ شلوارئِ پادگ دِرتگ اَت

سکندرؔئِ مُود دیما شِنگ اِتنت

ہمبلؔئِ گْورجیگ پچ اَت

و عبداللہؔ ئِ لُنٹانی سرا مُشوک رچان اِتنت۔

’’شرّیں یار تو اتک ئے۔۔۔۔مارا پہ تو چوں زہیر بوتگ زانا۔۔۔‘‘

سکندرؔ ئِ چمّ بند اِتنت و گُشت  ئےِ ۔

’’ہؤ گندئے۔۔۔۔۔شرّیں بیا مرچی ما سکّ پلج ایں…..سدیگے بدئے گوں ۔۔موُڈ پُوڈ ئےِ  بنائین ایں گُڑا شپ ئَ تئی چارگ ئَ کائیں۔۔۔۔ ‘‘

باہوٹ ئَ پہ نَمہتلی درّائینت۔

پنچ سال ئِ گِستائی ئَ بازیں چیزے من ئَ داتگ  اَت و بازیں چیزے چہ من پچ گِپتگ اَت۔

پنچ سال ئِ شَہری زِند ئَ منی تب وزِندمان بدل کُتگ اِتنت

پنچ سال ئِ گِستائی ئَ منی پلگاریں چاگردو وانندہیں سنگت چہ من پچ گِپتگ اِتنت۔

پنچ سال ئِ دوہیں بدل بوتگیں حکومتاں منی چاگرد شرّ دیمرئی داتگ اَت۔۔۔۔بے روزگاری ئِ ۔۔۔۔۔۔۔نشہ ئِ۔۔۔۔پدمنتگی ئِ۔۔۔۔

البت منی وانگ جاہ ئِ سرا مِکّیں بیرک نوک اَت۔

 

٭٭٭

 

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*